ملک میں گاڑیوں کی بلیک مارکیٹینگ میں ہوشرباء اضافہ

ملک میں گاڑیوں کی بلیک مارکیٹینگ میں ہوشرباء اضافہ

ملک میں گاڑیوں کی طلب میں بے پناہ اضافے کی وجہ سے گاڑیوں کی بلیک مارکیٹینگ میں ہوشرباء اضافہ ہوگیا ہے جس کی وجہ سے عام صارف کی ملک بھرمیں ہنڈا،ٹیوٹااورسوزوکی کے ڈیلرزگاڑیوں کیلئے بکنگ نہیں کررہے بلکہ فرضی ناموں پربکنگ کرکے گاڑیاں زائد قیمت پرجسے اون کہاجاتاہے فروخت کرتے ہیں جس سے ملک کی 70%گاڑیاں مافیاکے زریعے بلیک مارکیٹ کے زریعے فروخت ہورہی ہیں جن کا ماہانہ نفع کروڑوں روپے میں ہے ۔ان خیالات کااظہارضلعی چیئرمین کارڈیلرایسوسی ایشن رحیم یار خان افتخارانجم نے صبا ح نیوز گفتگو کرتے ہوئے کیا۔انہوںنے کہاکہ پاکستان میں گاڑیاں اسمبلڈ کرنے والی کمپنیوں نے پلانٹ کے برابرسرمایہ لوگوں سے اکٹھاکرلیاہے اورپلانٹس نے ابھی تک کام شروع نہیں کیااورپاکستان میںجوگاڑیاں بڑے ادارے فروخت کررہے ہیں وہ سونے کی قیمت لیکرلوہافروخت کررہے ہیں اورتمام گاڑیاں سب سٹینڈرڈہیں ۔اس طرزعمل سے بلیک منی کووائٹ کیاجارہاہے ۔چوہدری افتخارانجم نے کہا کہ نیب اوردیگرادارے تحقیقات کریں تاکہ ملک بھرمیں عام صارف کوبھی بغیراضافی قیمت اداکیے اپنی مرضی کی گاڑی مل سکے ۔انہوںنے کہاکہ بڑی گاڑیوں پرفی گاڑی اون 5سے سات لاکھ روپے چل رہاہے اورچھوٹی گاڑیوں پرڈیڑھ سے تین لاکھ روپے اون چل رہاہے جس کاصارف کوبے حدنقصان ہورہاہے اوراس کافائدہ صرف مافیاکوہورہاہے ۔حکومت کوبھی اس کاکوئی فائدہ نہیں پہنچ رہاانہوںنے کہا کہ اگرحکومت نے فوری طورپراس حوالے سے کوئی اقدام نہ اٹھایاتوہم ملک بھرمیں احتجاج کریں گے۔

Most Popular