نصرت فتح علی خان کی انہترویں سالگرہ آج منائی جارہی ہے

 نصرت فتح علی خان کی انہترویں سالگرہ آج منائی جارہی ہے

موسیقی کی دنیا کے عظیم نام استاد نصرت فتح علی خان کی آواز سرحدوں کی قید سے آزاد تھی۔ اس فنکار نے بین الاقوامی سطح پر اپنی صلاحیتوں کا لوہا منوایا۔ نصرت فتح علی خان نے بطور قوال دم مست قلند مست مست سے ملک گیر شہرت حاصل کی ۔ان کے مقبول نغموں میں انکھیاں اڈیک دیاں، یار نا وچھڑے، میرا پیا گھر آیا اور میری زندگی سمیت متعدد شامل ہیں۔نصرت فتح علی خان کی ایک حمد وہ ہی خدا ہے کو بھی بہت پذیرائی ملی ،،مقبوضہ کشمیر کے عوام کے لئے گایا گیا گیت 'جانے کب ہوں گے کم اس دنیا کے غم' آج بھی لوگوں کے دلوں میں بسے ہیں، کوئی بھی قومی تہوار میرا پیغام پاکستان کے بغیر ادھورا لگتا ہے۔نصرت فتح علی خان نے ناصرف پاکستان بلکہ دنیا بھر میں لوگوں کو اپنا گرویدہ بنا لیا بھارت میں لوگ ان کی آواز کی پوجا کرتے تھے، نصرت فتح علی خان نے ڈیڈ مین واکنگ، بینڈٹ کوئین، دی لاسٹ ٹیمپٹیشن آف کرائسٹ اور نیچرل بورن کلرز جیسی بین الاقوامی فلموں کیلئے میوزک، گیت، ساؤنڈ ٹریکس اور الاپ وغیرہ بھی گائے اور بنائے۔استاد نصرت فتح علی خان کی فنی خدمات کے صلہ میں انہیں حکومت پاکستان کی جانب سے پرائیڈ آف پرفارمنس سے بھی نواز اگیا، 1995 میں انہیں یونیسکو میوزک ایوارڈ دیا گیا جبکہ 1997 میں انہیں گرامی ایوارڈز کیلئے نامزد کیا گیا۔ قوالیوں کے پچیس البم ریلیز ہونے پر انہیں گینز بک آف ورلڈ ریکارڈ میں جگہ دلوائی۔

Most Popular