میانمار نے ’جنگ بندی‘ کی پیشکش مسترد کر دی

میانمار نے ’جنگ بندی‘ کی پیشکش مسترد کر دی

میانمار کے حکام نے رخائن میں روہنگیا باغیوں کی جانب سے یکطرفہ جنگ بندی کو مسترد کرتے ہوئے کہا ہے کہ ’دہشت گردوں‘ سے مذاکرات نہیں کیے جائیں گے۔

خیال رہے کہ ارکان روہنگیا سیلویشن آرمی (آرسا) نامی تنظیم نے میانمار کی فوج سے بھی کہا تھا کہ وہ ہتھیار ڈال دیں۔تاہم اتوار کو حکومتی ترجمان زا ہتے نے کہا ہے کہ میانمار ’دہشت گردوں‘ سے مذاکرات نہیں کرے گا۔روہنگیا مسلمانوں نے الزام لگایا ہے کہ فوج اور بودھسٹ مسلمانوں پر مظالم کیا جا رہا ہے اور ان کی آبادیوں کو آگ لگائی جا رہی ہے۔میانمار کی حکومت نے ان الزامات کو مسترد کرتے ہوئے کہا ہے کہ فوج روہنگیا ’دہشت گردوں‘ کے خلاف لڑ رہی ہے۔اتوار کو ٹویٹر پر حکومتی ترجمان نے اپنے پیغام میں کہا کہ ’ہماری دہشت گردوں کے ساتھ بات چیت کی کوئی پالیسی نہیں ہے۔‘

Most Popular