تنقید کرنے والوں کے ٹویٹر اکاﺅنٹ بلاک کرنے پر امریکی صدرکے خلاف مقدمہ درج

تنقید کرنے والوں کے ٹویٹر اکاﺅنٹ بلاک کرنے پر امریکی صدرکے خلاف مقدمہ درج

تنقید کرنے والوں کے ٹویٹر اکاﺅنٹ بلاک کرنے پر امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے خلاف مقدمہ درج کر دیا گیا۔ امریکی ذرائع ابلاغ کی رپورٹ کے مطابق یہ مقدمہ انسانی حقوق کے تحفظ کے لئے کام کرنے والے ادارے نائٹ ایمنڈمنٹ فرسٹ انسٹی ٹیوٹ نے سماجی رابطوں کی ویب سائٹ ٹویٹر کے 7 صارفین کی شکایت پر درج کراتے ہوئے موقف اختیار کیا ہے کہ امریکی صدر نے ان افراد کے اکاﺅنٹ بلاک کر کے امریکی آئین میں پہلی ترمیم کے ذریعے شہریوں کو دیئے گئے آزادی اظہار کے حق کی خلاف ورزی کی ہے اور اسے مخالفت میں اٹھنے والی آواز کو بزور دبانے کے مترادف قرار دیا ہے۔مقدمہ میں امریکی صدر کی سرکاری رہائش وائٹ ہاﺅس کے پریس سیکرٹری شون سپائسر اور صدر کے سوشل میڈیا ڈائریکٹر ڈینیئل سکاوینو کو بھی فریق بنایا گیا ہے۔کولمبیا یونیورسٹی کے نائٹ ایمنڈمنٹ فرسٹ انسٹی ٹیوٹ کے ایگزیکٹو ڈائریکٹر جمیل جعفر کا کہنا ہے کہ صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی طرف سے ٹویٹر کا استعمال اس بات کا ثبوت ہے کہ ٹویٹر حکومت بارے خبروں اور معلومات کا اہم ذریعہ ہے۔ صدر کی طرف سے ٹویٹر پر اپنے فالوئرز کو روکنا خلاف قانون ہے۔ واضح رہے کہ ٹویٹر پر امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے فالوئرز کی تعداد تین کروڑ 37 لاکھ ہے۔

Most Popular