امریکا کا افغانستان میں نجی سیکیورٹی ٹھیکیداروں کی تعیناتی پر غورجاری ہے۔

امریکا کا افغانستان میں نجی سیکیورٹی ٹھیکیداروں کی تعیناتی پر غورجاری ہے۔

امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے خصوصی مشیر کی جانب سے افغانستان میں موجودہ امریکی فوجیوں کو نجی سیکیورٹی ٹھیکیداروں سے تبدیل کرنے پر غور کیا جارہا ہے، امریکی میڈیا رپورٹس کے مطابق ٹرمپ کے خصوصی مشیر ہر اس ممکنہ راستے پر غور و فکر کرنے میں مصروف ہیں جس کے ذریعے افغانستان میں نجی سیکیورٹی ٹھیکیداروں کو تعینات کیا جاسکے۔نیویارک ٹائمز کی رپورٹ کے مطابق امریکی صدر کے 2 مشیروں نے ٹرمپ انتظامیہ کے سینئر ارکان کے ساتھ اس معاملے پر تفصیلی بات چیت کی، جن میں امریکی صدر کے داماد جیرڈ کشنر بھی شامل تھے۔خیال رہے رپورٹ میں دعوی کیا گیا ہے کہ ایک اور اہم مشیر اسٹیفن بینون نے امریکی وزیر دفاع جیمز میٹس سے پینٹاگون میں اس معاملے کے حل کے لیے تفصیلی گفتگو کرنے کی کوشش کی تاہم وزیر دفاع نے افغانستان کی پالیسی پر بیرونی حکمت عملی کو لاگو کرنے سے انکار کردیا۔مریکی میڈیا کے مطابق جیرڈ کشنر اور اسٹیفن بینون نے 2 نجی دفاعی کمپنیوں کے ٹھیکیداروں کو بھرتی کیا ہے جس کا مقصد افغانستان میں امریکا کے ہونے والے نقصان کو کم سے کم کرنا ہے۔امریکی میڈیا کے مطابق افغانستان میں جاری طویل امریکی جنگ پر پینٹاگون اور وائٹ ہاس ایک دوسرے سے خوش اور مطمئن نظر نہیں آتے بلکہ دونوں اداروں میں فاصلہ بڑھتا جارہا ہے۔

Most Popular