دہشت گردوں کے خلاف موثر کارروائی تک ہنگامی حالت کا نفاذ جاری رہے گا۔ ترک صدر

دہشت گردوں کے خلاف موثر کارروائی تک ہنگامی حالت کا نفاذ جاری رہے گا۔ ترک صدر

ترک صدر رجب طیب اردوان نے کہا ہے کہ فیتو دہشت گرد تنظیم کے خلاف موثر کارروائی تک ہنگامی حالت کا نفاذ جاری رہے گا۔ غیر ملکی خبررساں ادارے کے مطابق فیتو دہشت گرد تنظیم کی طرف سے 15 جولائی کے حملے کے اقدام کا پہلا سال مکمل ہونے کے موقع پر صدر رجب طیب اردوان نے انقرہ میں غیر ملکی سرمایہ کاروں کے اجلاس میں شرکت کی۔اجلاس سے خطاب میں صدر اردوان نے کہا ہے کہ 15 جولائی کے حملے کے اقدام نے جمہوریت اور آزادیوں کے ساتھ ساتھ معیشت کو بھی ہدف بنایا تاہم گزرتے وقت کے ساتھ معیشت میں بہتری آئی ہے۔انہوں نے کہا کہ جہاں تک ہنگامی حالات کا تعلق ہے اس کی مدت کا تعین ہم کریں گے، مغرب نہیں۔ ہمارے سامنے ایک طرف 80 ملین شہری اور 7 لاکھ 80 ہزار کلومیٹر ارضِ وطن ہے تو دوسری طرف دہشت گرد تنظیم فیتو ہے، انتخاب ان دونوں کے درمیان کیا جائے گا جو ظاہر ہے۔ زمانہ مستقبل قریب میں ہنگامی حالات کا خاتمہ ممکن ہے۔خطاب میں گذشتہ ہفتے جرمنی کے شہر ہیمبرگ میں منعقدہ جی۔20 سربراہی اجلاس پر بھی بات کرتے ہوئے صدر ایردوان نے کہا کہ ہیمبرگ ہر طرف سے احتجاجی مظاہروں کی لپیٹ میں تھا ، ہزاروں سکیورٹی اہلکار موجود تھے۔ ہم نے کسی قسم کے خلل کے بغیر جی۔20 سربراہی اجلاس کیا۔ اجلاس کے دوران ہمارے دوستوں نے ایک تواتر سے انطالیہ میں منعقدہ اجلاس کو یاد کیا اور کہا کہ وہاں کی بات ہی کچھ اور تھی۔جی۔ 20 کے حوالے سے یورپ میں مقیم ترک شہریوں نے بھی ہیمبرگ میں جلوس نکالنا چاہا لیکن اس کی اجازت نہیں دی گئی۔صدر اردوان نے مغرب کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ آپ کے آزادیوں کے دعوے کہاں گئے، آپ آئیں ہم آپ کو جہاں آپ چاہیں وہاں جلوس کی اجازت دیتے ہیں۔ ہالینڈ، بیلجئیم غرض ہر جگہ ایسے ہی ہے یہ آزادی اظہار سے ڈرتے ہیں لیکن ہم نہیں ڈرتے کیوں کہ ہمیں اپنی سوچ پر بھروسہ ہے۔

Most Popular