بھارت نے دریائے چناب کا پانی دوبارہ مقبوضہ کشمیر کے علاقہ میں بگلیہارڈیم پر روک لیا۔

بھارت نے دریائے چناب کا پانی دوبارہ مقبوضہ کشمیر کے علاقہ میں بگلیہارڈیم پر روک لیا۔

سندھ طاس معاہدہ کی خلاف ورزی کرتے ہوئے بھارت نے دریائے چناب کا پانی دوبارہ مقبوضہ کشمیر کے علاقہ میں بگلیہارڈیم پر روک لیا ہے جس کے بعد دریائے چناب میں ہیڈمرالہ کے مقام پر پانی کی آمد 65ہزار کیوسک سے کم ہوکر 33ہزار چار سو اٹھارہ کیوسک رہ گئی ہے اور پانی کی کمی کی وجہ سے دونہروں اپر چناب اور مرالہ راوی لنک کے پانی میں بھی کمی کردی گئی ہے ، محکمہ ایری گیشن کے مطابق دریائے چناب کا پانی بھارت نے پہلے بھی روک رکھا تھااور دس ماہ بعد پانی کھولا تو گیا لیکن چند دن کے بعد اب دوبارہ بھارت نے پانی روک لیا ہے اوراس وجہ سے دریائے چناب کے پانی میں کمی واقع ہوئی ہے اور ہیڈمرالہ کے مقام پر پانی کی آمد کم ہوکر33ہزارچار سو اٹھارہ کیوسک رہ گئی ہے اور محکمہ ایری گیشن کے مطابق دریائے چناب کا مجموعی پانی 37ہزار باسٹھ کیوسک ہے جس میں مقبوضہ کشمیر سے آنیو الے دو دریاؤں مناور توی کا ایک ہزار تین سو سنتالیس کیوسک پانی اور دریائے جموں توی کا دو ہزار دو سو ننانوے کیوسک پانی بھی شامل ہے ، ہیڈمرالہ سے نکلنے والی نہر مرالہ راوی لنک کا پانی انیس ہزار کیوسک سے کم کرکے چودہ ہزار پانچ سو بارہ کیوسک اور دوسری نہر اپر چناب کا پانی بھی چودہ ہزار کیوسک سے کم کرکے بارہ ہزار پانچ سو پچاس کیوسک پانی کردیا گیا ہے ، رکن صوبائی اسمبلی رانا محمد اقبال ہرناہ کے مطابق بھارت سندھ طاس معاہدہ کی خلاف ورزی کرتے ہوئے روزانہ55ہزار کیوسک پانی چھوڑنے کی بجائے اب دوبارہ پانی روک لیا گیا ہے جس کی وجہ سے پانی میں نمایاں کمی واقع ہوئی ہے اور ماضی میں بھارت کی طرف سے پانی روکے جانے کی وجہ سے دریا بھی خشک ہوا اور لاکھوں ایکٹر زرعی رقبہ کونقصان پہنچ چکا ہے اس لئے بھارت ہٹ دھرمی چھوڑ کر دریائے چناب کا پانی کھول دے۔

Most Popular