ہندوستان زیادہ دیر تک کشمیریوں کو غلام نہیں رکھ سکے گا۔ سردار محمد مسعود خان

ہندوستان زیادہ دیر تک کشمیریوں کو غلام نہیں رکھ سکے گا۔ سردار محمد مسعود خان

صدر آزاد جموں و کشمیر سردار محمد مسعود خان نے کہا ہے کہ ہندوستان تمام تر مکر و فریب کے باوجود کشمیر کو زیادہ دیر تک غلام نہیں رکھ سکے گا۔ مقبوضہ کشمیر کے عوام ہمارے جسم کا حصہ ہیں۔ انہیں مصنوعی طور پر ایک جارحیت کے ذریعے ہم سے جدا کیا گیا ہے۔ ہندوستان کی یہ جارحیت اب بھی جاری ہے۔ مسلمانوں کو اپنی ہی سرزمین پر گاجر مولی کی طرح کاٹا جا رہا ہے۔ لاکھوں جانوں کا نذرانہ دینے کے باوجود کشمیریوں کے حوصلے پست نہیں ہوئے۔ آج بھی جنازوں کے اجتماعات اور مظاہروں میں ایک ہی نعرہ بلند ہوتا ہے پاکستان سے رشتہ کیا لاالہ الا اللہ۔ پاکستان کو بھی کشمیریوں سے محبت اور اُن کی وکالت کی بڑی سزا دی گئی ہے۔ اس کا ایک بازو کاٹ دیا گیا اور بقیہ پاکستان کو بھی ٹکڑے کرنے کی دھمکیاں دی گئیں۔ لیکن پاکستان تمام تر مشکلات کے باوجود اپنے مؤقف پر ثابت قدمی سے ڈٹا رہا۔ اب انشاء اللہ پاکستان معاشی اور اقتصادی طور پر مستحکم اور سیاسی طور پر مضبوط ہو رہا ہے۔ کشمیر کی آزادی کیلئے ہمیں اپنی صفوں میں اتحاد پیدا کرنا اور اپنی آوازوں کو یکجا کرنا ہو گا۔ دشمن آپ کی صفوں میں انتشار اور اختلاف پیدا کرنے کی کوششیں کر رہا ہے۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے مظفرآباد میں جرمن این جی او فری کشمیر آرگنائزیشن کے زیر اہتمام مقبوضہ کشمیر کی صورتحال اور بحیثیت قوم کشمیریوں کے کردار'' کے موضوع پر منعقدہ کشمیر کانفرنس سے بحیثیت مہمان خصوصی خطاب کرتے ہوئے کہا۔ صدر آزاد کشمیر نے کہا کہ کشمیریوں نے جانوں کا نذرانہ دے کر مسلۂ کشمیر کو زندہ رکھا ہوا ہے۔ ہندوستان نہتے کشمیریوں کو چُن چُن کر مارتا ہے اور پھر خود کو مظلوم بنا کر عالمی برادری کے سامنے روتا ہے۔ اس کا یہ فریب دنیا کے سامنے بے نقاب کرنے کی ضرورت ہے۔ کشمیری نوجوان تعلیم حاصل کریں اور اپنے اندر بہترین صلاحیت پیدا کریں۔ علم کی بدولت دنیا آپ کی بات توجہ سے سنے گی۔ تارکین وطن ہمارا بہت بڑا اثاثہ ہیں۔ اُن کو متحرک کر کے مسلۂ کشمیر اجاگر کرنے کیلئے منظم طریقے سے استعمال کرنے کی ضرورت ہے۔ آج جرمنی، برطانیہ، امریکہ، کینیڈا اور دیگر یورپی ممالک میں مقیم کشمیری تارکین وطن پڑھے لکھے بااثر اور صاحب ثروت ہیں۔ انہیں منظم کرنے کی ضرورت ہے۔ جس ہوشیاری اور چابکدستی سے ہندوستانی تارکینِ وطن اپنے قومی مفادات کیلئے کام کرتے ہیں ہمیں اپنے تارکین وطن میں بھی وہی جذبہ پیدا کرنا ہو گا۔ اس سلسلے میں کشمیر کا ہر فرد اپنا کردار ادا کرے۔ صدر آزاد کشمیر نے کہا کہ ملک و قوم کو ترقی اور خوشحالی سے ہمکنار کرنے کیلئے علم کے میدان میں آگے بڑھنا ہو گا۔ آزاد کشمیر دنیا کے چند خوبصورت خطوں میں سے ایک ہے۔ جس کی ترقی کیلئے حکومت آزاد کشمیر نے 8 اہداف مقرر کر دئیے ہیں۔ آزاد کشمیر چین پاکستان اقتصادی راہداری کا حصہ بن چکا ہے۔ دو منصوبوں پر کام شروع ہو چکا ہے۔ صدر سردار مسعود خان نے کہا کہ فری کشمیر آرگنائزیشن اور اس کے سربراہ ڈاکٹر محمد صدیق کیانی آزاد کشمیر میں بہترین کام کر رہے ہیں۔ دیگر صاحب ثروت تارکین وطن کو بھی ڈاکٹر صدیق کیانی کے نقش قدم پر چلتے ہوئے ریاست کے عوام کو ہنر مند بنانے کیلئے کردار ادا کرنا چاہیے۔ صدر آزاد کشمیر نے یقین دلایا کہ حکومت آزاد کشمیر ڈاکٹر صدیق کیانی اور اُن کی تنظیم کے ساتھ بھرپور تعاون کرے گی۔ اس موقع پر سابق سفیر سید حسن جاوید نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ کشمیر تقسیم ہند کا نامکمل ایجنڈا ہے۔ علامہ اقبال نے جو پیشگوئیاں کی تھیں اُن میں سے چین کے سپر پاور بننے سمیت بیشتر پوری ہو چکی ہیں۔ اُن کی کشمیر کی آزادی کی پیشگوئی بھی ضرور پوری ہو گی۔ اہل پاکستان کا کشمیر کے ساتھ خونی اور روحانی رشتہ ہے۔ میں نے اپنی 37 سالہ سروس کے دوران کشمیر کیلئے ایک مشن کے طور پر کام کیا۔ میں پورے وثوق سے کہتا ہے کہ کشمیر آزاد ہو کر پاکستان کا حصہ بنے گا۔ دنیا کی کوئی طاقت کشمیریوں کو آزادی کی نعمت سے محروم نہیں رکھ سکتی۔ ڈاکٹر محمد صدیق کیانی نے کہا کہ ہندوستان دنیا کی سب سے بڑی جمہوریت کا دعویدار ہونے کے باوجود کشمیریوں کے حوالے سے انتہائی غیر جمہوری رویے کا مظاہرہ کرتا ہے۔ ہم وہاں پر بھی مسلۂ کشمیر اجاگر کرنے کیلئے کام کرتے ہیں۔ آزاد کشمیر میں بھی اپنے حصے کا کام کر رہے ہیں۔ زلزلے کے بعد کام شروع کیا تھا۔ اب تک ووکیشنل سنٹر میں 300 سے زائد خواتین کو ہنر مند بنا چکے ہیں

Most Popular