اسلام آباد ہائیکورٹ نے نیب ریفرنسز کو یکجا کرنے کی درخواستوں پر فیصلے کی تاریخ مقرر کردی

اسلام آباد ہائیکورٹ نے نیب ریفرنسز کو یکجا کرنے کی درخواستوں پر فیصلے کی تاریخ مقرر کردی

سابق وزیراعظم نواز شریف کی نیب ریفرنسز کو یکجا کرنے کی درخواستوں پر فیصلےکی تاریخ مقرر، اسلام آباد ہائیکورٹ نے نواز شریف کی تینوں درخواستوں کی کازلسٹ جاری کردی، اسلام آباد ہائیکورٹ 4 دسمبر کو نواز شریف کی درخواستوں پر فیصلہ سنائے گی، جسٹس عامر فاروق اور جسٹس محسن اخترکیانی نے فیصلہ تحریر کرلیا، نواز شریف نے ایوون فیلڈ، عزیزیہ اور فلیگ شپ ریفرنسز یکجا کرنے کی استدعا کی تھی۔ جس میں کہا گیا کہ تھاکہ تینوں ریفرنسز ایک ہی نوعیت ہے کہ اس لئے عدالت سے استدعا ہے کہ تینوں ریفرنسز کو یکجا کیا جائے، اس سے پہلے نیب عدالت نے ریفرنزس یکجا کرنے سے متعلق درخواست کو مسترد کردی تھا جس کے بعد سابق وزیراعظم نے اسلام آباد ہائیکورٹ سے رجوع کیا۔۔۔ اسلام آباد ہائیکورٹ کے حکم پر احتساب عدالت نے نظر ثانی اپیل کو بھی مسترد کردیا تھا۔۔ سپریم کورٹ نے 28 جولائی کو پاناما لیکس مقدمے میں نواز شریف کو نااہل قرار دیتے ہوئے نیب کو ان کے خلاف ریفرنس دائر کرنے کا حکم دیا تھا۔ نیب نے 8 ستمبر کو نوازشریف اور ان کے بچوں کے خلاف لندن فلیٹس، آف شورکمپنیوں، عزیزیہ اسٹیل اور ہل میٹل کمپنی سے متعلق 3 مقدمات درج کیے۔ ان مقدمات میں نیب آرڈیننس کی سیکشن 9 اے لگائی گئی ہے جو آمدن سے اثاثے بنانے، غیرقانونی رقوم اور تحائف کی ترسیل سے متعلق ہے۔ جرم ثابت ہونے کی صورت میں ملزمان کو 14 سال قید کی سزا ہوسکتی ہے۔

Most Popular