سپریم کورٹ نے وفاقی حکومت سے خصوصی عدالتوں میں ججز کے تقرر سے متعلق نوٹیفکیشن کل تک طلب کر لیا ہے۔

سپریم کورٹ نے وفاقی حکومت سے خصوصی عدالتوں میں ججز کے تقرر سے متعلق نوٹیفکیشن کل تک طلب کر لیا ہے۔

چیف جسٹس افتخار محمد چوہدری کی سربراہی میں قائم تین رکنی بینچ نے خصوصی عدالتوں میں جج مقرر نہ کرنے کے خلاف درخواست کی سماعت کی۔ سماعت کے دوران ڈپٹی اٹارنی جنرل نے عدالت کو بتایا کہ خصوصی عدالتوں میں ججز کی تقرری سے متعلق عدالتی احکامات پر عملدرآمد کے لئے سمری بھیج دی گئی ہے جیسے ہی وہ منظورہو کر آئے گی تو عدالت کو آگاہ کر دیا جائے گا۔ چیف جسٹس نے ریمارکس دیتے ہوئے کہا کہ بڑے افسوس کی بات ہے کہ عدالتی احکامات پر عملدرآمد نہیں ہو رہا۔ ہمارا مقصد ملک میں قانون اور آئین کی بالادستی ہے۔ جسٹس خلجی عارف حسین نے کہا کہ ججز کی تقرری کے حوالے سے حکومت بے نتیجہ اقدامات اٹھا رہی ہے۔ جسٹس جواد ایس خواجہ نے کہا کہ دنیا کو یہ تاثر جائے گا کہ حکومت اینٹی کرپشن بینکنگ اور انسداد دہشتگردی کی عدالتوں میں ججز کی تقرری کرنے میں دلچسپی نہیں لے رہی۔ عدالتی احکامات پر عمل نہیں ہوگا تو توہین عدالت کے نوٹس جاری کئے جاتے ہیں۔ اگر عدالت ایسے نوٹسز جاری کرتی ہے تو پھر کہا جاتا ہے کہ نیا محاذ کھل گیا ہے۔ عدالت نے سماعت کل تک ملتوی کرتے ہوئے ڈپٹی اٹارنی جنرل کو حکم دیا کہ خصوصی عدالتوں میں ججز کی تقرری کا نوٹیفکیشن کل عدالت میں پیش کیا جائے۔

About the author /

Waqt News

Waqt News Web Team

Most Popular