سپریم کورٹ نے شنگھائی الیکٹرک ،کے الیکٹرک اور وفاق سے جواب طلب کر لیا۔

سپریم کورٹ نے شنگھائی الیکٹرک ،کے الیکٹرک اور وفاق سے جواب طلب کر لیا۔

چیف جسٹس پاکستان جسٹس ثاقب نثار کی سربراہی میں تین رکنی بنچ نے کیس کی سماعت کی۔ چیف جسٹس نے ریمارکس دیئے کہ روایت بن گئی ہے تمام معاملات متعلقہ فورم کے بجائے سپریم کورٹ میں آجاتے ہیں۔ لوگ امید رکھتے ہیں انصاف صرف سپریم کورٹ سے ہی ملے گا۔ ہم کسی کو مایوس نہیں کریں گے۔ وکیل جماعت اسلامی رشید رضوی نے کہا کہ دوہزار پانچ میں کراچی الیکٹرک کی نجکاری ہوئی۔ ایک سال میں پندرہ سوسے زائد افراد بجلی کی بندش سے انتقال کرچکے ہیں۔ چیف جسٹس نے کہا کہ گرمیوں کی چھٹیوں کے باعث کیس نہیں سن سکتے۔ آدھے سے زیادہ ججز چھٹیاں نہیں کریں گے۔ امیر جماعت اسلامی کراچی حافظ نعیم الرحمان کا کہنا تھا کہ عدالت کراچی کو ریلیف دے۔ چیف جسٹس کا کہنا تھا کہ کیالوڈ شیڈنگ ختم کرنے کاحکم دے سکتے ہیں۔ حکومت کے وسائل کومدنظر رکھ کر ہی احکامات دے سکتے ہیں۔ سماعت میں کے الیکٹرک کی جانب سے درخواست کو ناقابل سماعت قراردے دیا گیا۔ وکیل کے الیکٹرک خالد انور کا کہنا تھا کہ معاملہ سندھ ہائی کورٹ میں بھی زیرالتوا ہے۔ درخواستیں بدنیتی اور فراڈ پر مبنی ہیں چیف جسٹس نے کہا کہ عدالت کیس کوسننے کااختیار رکھتی ہے۔ وکیل جماعت اسلامی کا کہنا تھا کہ کراچی میں پیک آوراورنان پیک آور کے الگ ریٹس ہیں۔ پورے شہر سے پیک آورز کا بل وصول کیا جارہا ہے۔ کے الیکٹرک اربوں روپے کافراڈ کررہا ہے۔ عدالت نے متفرق درخواستوں پر کے الیکٹرک کونوٹس جاری کرتے ہوئے سماعت گرمیوں کی چھٹیوں کے بعد تک ملتوی کردی۔

Most Popular