پاکستان پیپلز پارٹی کے سینئر رہنما اور سابق صوبائی وزیر اطلاعات شرجیل انعام میمن کو اسلام آباد ائیرپورٹ پر گرفتاری کے بعد رہا کردیا گیا،

پاکستان پیپلز پارٹی کے سینئر رہنما اور سابق صوبائی وزیر اطلاعات شرجیل انعام میمن کو اسلام آباد ائیرپورٹ پر گرفتاری کے بعد رہا کردیا گیا،

اربوں روپے کی مبینہ کرپشن میں ملوث شرجیل انعام میمن رات گئے اسلام آباد پہنچے تو ملکی سیاست میں ہلچل مچ گئی،،، ایف آئی اے کے اہلکاروں نے سابق صوبائی وزیر کو جہاز سے حراست میں لے کر نیب کے حوالے کردیا،،، پیپلز پارٹی کے دیگر رہنماء امداد پتافی، مکیش چاولہ، فیاض بُٹ اور تیمورتالپور بھی ان کے ہمراہ تھے۔ گرفتاری کے وقت شرجیل میمن نے سیکیورٹی اہلکاروں کے ساتھ ہاتھا پائی بھی کی،،، نیب نے شرجیل میمن کو اڑھائی گھنٹے تک حراست میں رکھا اور پوچھ گچھ کی،،، شرجیل میمن کے وکیل نے عدالت نے جانب سے جاری ان کے ضمانتی دستاویزات نیب حکام کے حوالے کئے جس کے مطابق شرجیل ممین بیس مارچ تک ضمانت پر تھے،،، ضمانتی دستاویزات کی پڑتال کے بعد شرجیل میمن کو رہا کردیا گیا،،، انہیں رہائی کے بعد سندھ ہاؤس منتقل کیا،، جہاں ان کا وزیراعلی سندھ سید مراد علی شاہ سے بھی رابطہ ہوا،،، شرجیل میمن نے وزیراعلیٰ سندھ کو تمام صورتحال سے آگاہ کیا۔۔۔ پاکستان پپپلز پارٹی نے شرجیل میمن کی گرفتاری کی شدید مذمت کی ہے،،، شرجیل میمن کےبیٹے نے بھی والد کی گرفتاری پر شدید مذمت کی،،، راول شرجیل ممن نے ٹوئٹر پیغام میں کہا کہ ضمانت کےباوجود ان کے والد کی گرفتاری افسوسناک عمل ہے۔۔۔۔

اربوں روپے کی کرپشن اور غیر قانونی الاٹنمنٹس کے کیسز کھلے تو سابق صوبائی وزیر اطلاعات شرجیل انعام میمن دوہزار پندرہ میں عہدہ چھوڑنے کے بعد بیرون ملک چلے گئے،، شرجیل میمن نے خودساختہ جلاوطنی اختیار کرلی،،، شرجیل میمن پہلے دبئی اور کافی عرصہ لندن میں بھی مقیم رہے،،،کرپشن کے مختلف کیسز میں متعدد بار ان کے ناقابل ضمانت وارنٹ گرفتاری بھی جاری ہو چکے ہیں ،،، شرجیل میمن کا نام ایگزٹ کنٹرول لسٹ میں بھی ڈالا گیا، انہوں نے اپنے وکیل کی توسط ضمانت قبل از گرفتاری اور ایگزٹ کنٹرول لسٹ سے نام نکالے جانے کے حوالے سے دو پٹیشنز دائر کی تھیں،،، اسلام آباد ہائیکورٹ نے انہیں کرپشن کیسز میں 20 مارچ 2017 تک انہیں حفاظتی ضمانت دے رکھی تھی،،، شرجیل میمن پر محکمہ اطلاعات میں پانچ ارب روپے کی کرپشن کا ریفرنس جبکہ زمینوں کی غیرقانونی الاٹمنٹ کی انکوائری بھی جاری ہے۔

Most Popular