دریائے سندھ میں سیلابی ریلے سے لیہ کے سو سے زائد زیرآب آگئے. متاثرین کیلئے لگائے گئے کیمپوں میں تعینات عملہ مدد کی بجائے ڈیوٹی سے غائب ہے۔

دریائے سندھ میں سیلابی ریلے سے لیہ  کے سو سے زائد زیرآب آگئے. متاثرین کیلئے لگائے گئے کیمپوں  میں تعینات عملہ  مدد کی بجائے ڈیوٹی سے غائب ہے۔

لیہ میں سیلابی ریلے کی آمد کے ساتھ واڑہ سیہڑاں، راجن شاہ، بصیرہ، جمن شاہ، کوٹلہ حاجی شاہ اور دریائے سندھ کے کنارےآباد بستیاں زیر آب آ گئیں۔ ضلعی انتظامیہ کا کہنا ہے کہ عوام کو سیلابی ریلے کی آمد سے قبل ہی نقل مکانی کی ہدایات جاری کر دی گئیں تھیں۔دوسری جانب ضلعی انتظامیہ نے فلڈ ریلیف کیمپ تو قائم کر دئیے لیکن متاثرین کی مدد اوررہنمائی کیلئے تعینات عملہ ڈیوٹی سے غائب ہے۔متاثرین کا کہنا ہے کہ انتظامیہ نے نقل مکانی کےدوران ان کی کوئی مدد نہیں کی جس پرانہیں شدید مشکلات کا سامنا کرنا پڑا۔

Most Popular