زلزلے سےاب تک جاں بحق ہونے والے افراد کی تعداد 300 سے تجاوز کر گئی

 زلزلے سےاب تک جاں بحق ہونے والے افراد کی تعداد 300 سے تجاوز کر گئی

پیر کی دوپہر دو بج کے نو منٹ پر زمین ایسی لرزی کہ سب کچھ تہس نہس کر کے رکھ دیا۔ خیبرپی کے اور گلگست بلتستان میں کچے اور کمزور مکانات طاقت زور کے سامنے ٹھہر نہ سکے جہاں لوگوں نے قیامت کا منظر قیامت سے پہلے ہی دیکھاپھر چند منٹ کے زلزلے سے کہیں چھتیں گریں تو کہیں پوری عمارتیں ہی زمین بوس ہو گئیں ۔شانگہ اس خوفناک زلزلے سے سب سے زیادہ متاثر ہوا جہاں اس کی تباہی کے نشانات واضح ہیں اور پچاس افراد لقمہ اجل بنے جبکہ اسی سے زائد زخمی ہیں اورر چار سو سترہ افراد اپنے مکانات سے محروم ہو چکے ہیں ۔ لوئر دیرمیں بھی تباہی کی داستان مختلف نہیں بائیس افراد جان سے گئے تو دو سو اٹھائیس مختلف ہسپتالوں میں امداد کے کیلئے راہ تک رہے ہیں ۔ دو سو چھیاسی مکانات تباہ ہونے سے لوگ شدید سردی میں کھلے آسمان تلے زندگی گزار رہے ہیں اور اپر دیر میں اٹھارہ جبکہ سوات میں بھی اٹھائیس افراد اس تباہی کی نذر ہوئے اور ایک سو اکسٹھ زخمی ہوئے ۔چترال بھی اس شدید تباہی سے نہ بچ سکا اوروہاں تیس افراد جاں بحق دو سو زخمی ہوئے ۔ باجوڑ میں چھیبس افراد لقمہ اجل بنے اور تین سو افراد اپنے مکانات سے ہاتھ دھو بیٹھے ۔ بونیر میں آٹھ ، مالاکنڈ میں دو ، غذر میں چار ، دیامر میں دو ، راولپنڈی میں تین ، چار سدہ میں تین ، نوشہرہ میں دو ، مانسہرہ میں ایک ، صوابی میں دو ، مردان میں تین ہنگو میں ایک اور اپر کوہستان میں گیارہ افراد کو خوفناک زلزلہ نگل گیا

Most Popular