مریم نواز اور کیپٹن ریٹائرڈ صفدر کی درخواست پر فرد جرم میں کیلبری فونٹ سے متعلق شق حذف

مریم نواز اور کیپٹن ریٹائرڈ صفدر کی درخواست پر  فرد جرم میں کیلبری فونٹ سے متعلق شق حذف

اسلام آباد کی احتساب عدالت کے جج محمد بشیر نے کیلیبری فونٹ سے متعلق مریم اور کیپٹن صفدر کی درخواست پر سماعت کی۔ مریم نواز کے وکیل امجد پرویز کا کہنا تھا کہ کیلیبری فونٹ میں تیار کی گئی دستاویز جعلی ثابت ہونے پر قانون کے مطابق کارروائی کا اختیار ہے۔ اس مرحلے پر اس الزام کو فرد جرم کا حصہ نہیں بنایا جا سکتا۔ نیب پراسیکیوٹر محمد افضل قریشی نے کہا کہ کیلیبری فونٹ اکتیس جنوری دوہزارسات سے قبل کمرشل طور پر دستیاب ہی نہ تھا۔ یہ بات سپریم کورٹ کے سامنے کلیئر ہو چکی ہے اس لیے الزام کو فرد کرم کا حصہ بنایا گیا ڈپٹی پراسیکیوٹر جنرل نیب سردار مظفر عباسی کا کہنا تھا کہ جعلی ٹرسٹ ڈیڈ سے متعلق فرانزک رپورٹ سپریم کورٹ میں پیش ہوئی۔ عدالت نے تحقیقات کے دوران اکٹھے کیے گئے مواد کا جائزہ لینا ہے۔ نیب پراسیکیوٹر عمران شفیق کا کہنا تھا کہ کیپٹن ریٹائرڈ صفدر صرف ٹرسٹ ڈیڈ پر دستخط کرنے والوں میں شامل ہیں
اگر ان کے خلاف چارج ختم کر دیا جائے تو پھر ریفرنس کیسے چلایا جائے گا۔ اس طرح تو یہ دونوں ملزمان کی ریفرنس سے بریت کی درخواست ہی ہو جائے گی۔ عدالت کی جانب سے فرد جرم میں مریم نواز اور کیپٹن صفدر کے خلاف جعل سازی کی دفعہ سیکشن تین اے ہٹانے کا حکم دیدیا گیا۔ عدالت کا کہنا تھا کہ کیلیبری فونٹ کی جعلی دستاویز سےمتعلق پیراگراف فرد جرم کے متن کا حصہ رہے گا۔ ریفرنسز کی سماعت کے دوران کیلیبری فونٹ سے متعلق اگر کوئی نئے شواہد آتے ہیں تو دوبارہ فرد جرم عائد کی جائے گی۔

Most Popular