پنجاب کے سابق وزیرداخلہ کرنل ریٹائرڈ شجاع خانزادہ شہید کی پہلی برسی آج عقیدت واحترام سے منائی جارہی ہے

پنجاب کے سابق وزیرداخلہ کرنل ریٹائرڈ شجاع خانزادہ شہید کی پہلی برسی آج عقیدت واحترام سے منائی جارہی ہے

پنجاب کے سابق وزیرداخلہ کرنل ریٹائرڈ شجاع خانزادہ سولہ اگست دو ہزار پندرہ کو اٹک کے علاقے شادی خان میں ڈیرے پر خود کش حملے میں شہید ہوگئے تھے،،شجاع خانزادہ پاک فوج سے ریٹائرمنٹ کے بعد تین بار پنجاب اسمبلی کے رکن منتخب ہوئے،،اکتوبر دو ہزار چودہ کو ان کو صوبائی وزیرداخلہ کاقلمدان سونپا گیا،،شہید شجاع خان زادہ آرمی پبلک سکول حملے کے بعد دہشت گردوں کے خلاف کارروائیوں کے سب سے بڑے حامی بن کر سامنے آئے،،جنوبی اور وسطی پنجاب میں دہشت گردوں کے خلاف آپریشن بھی ان کے کارناموں میں سے ایک ہے،،شدت پسندی کے خلاف سخت رویے کے باعث شجاع خان زادہ کو کالعدم تنظیموں کی جانب سے دھمکیاں بھی مل رہی تھیں،،اور ان پر حملے کی ذمہ داری کالعدم لشکر جھنگوی نے قبول کرتےہوئےاس کو اپنے سربراہ ملک اسحاق کے قتل کابدلہ قرار دیا تھا،،شجاع خان زادہ نے دہشت گردی کے خاتمے کے لیے پنجاب میں کئی اقدامات بھی کیے،ان میں محکمہ انسداد دہشت گردی اور اینٹی ٹیررسٹ فورس کا قیام نمایاں ہے،،حکومت نے شہید شجاع خان زادہ کی قومی خدمات پر ان کو ہلال شجاعت بھی عطا کیا،

Most Popular