بھارتی شہر ممبئی میں ان کی کتاب کے آرگنائزر پر کیے جانیوالے حملے کی مذمت کی :خورشید محمود قصوری

 بھارتی شہر ممبئی میں ان کی کتاب کے آرگنائزر پر کیے جانیوالے  حملے کی مذمت کی :خورشید محمود قصوری

ممبئی میں اپنی کتاب کے آرگنائزر سدھیر کلکرنی کے ہمراہ پریس کانفرنس کرتے ہوئے خورشید قصوری کا کہنا تھا کہ انہیں افسوس ہے کہ شیو سینا نے کلکرنی کو صرف اس لیے نشانہ بنایا کہ وہ ان کی کتاب کی آرگنائزنگ کمیٹی کے سربراہ ہیں ،،ان کا کہنا تھا کہ انیس سو ننانوے میں پاکستان اور بھارت کے درمیان تعلقات تاریخ کے بہترین موڑ پر تھے اور تمام تصفیہ طلب امور حل ہونے کے نزدیک تھے ،،اٹل بہاری واجپائی کا دورہ پاکستان اس سلسلے کی اہم ترین کڑی تھا لیکن پھر اچانک چیزیں بدلیں اور واقعات اتنی تیزی سے رونما ہوئے کہ امن خواب بن کر رہ گیا ،،خورشید قصوری اپنی کتاب neither a hawk nor a dove کی لانچنگ کے سلسلے میں آجکل ممبئی میں ہیں

بھارت کے شہر ممبئی میں شیو سینا کے غنڈوں نے ایک آرگنائزر کی صرف اس لیے پٹائی کر دی کہ وہ سابق پاکستانی وزیر خارجہ خورشید محمود قصوری کی لکھی ہوئی کتاب کی بھارت میں رونمائی کی تیاریاں کر رہا ہے

سدھیندر کلکرنی کا تعلق پبلشنگ کے شعبے سے ہے اور وہ بھارتیہ جنتا پارٹی کا سابق عہدیدار بھی ہے ،،کلکرنی کے مطابق آج صبح شیو سینا کے چند غنڈوں نے اس کی رہا ئش گاہ سے کچھ دور اس کی گاڑی کو روکا اور اسے باہر آنے کو کہا ، باہر نکلنے پرغنڈوں نے اس کے چہرے پر سیاہی انڈیل دی جس سے اس کا چہرہ اور لباس سیاہ ہو گیا ،،سدھیندر کلکرنی سابق پاکستانی وزیر خارجہ خورشید قصوری کی کتاب کی بھارت میں لانچنگ کا آرگنائزر ہے ،،غنڈوں نے اسے کتاب لانچ کرنے سے باز رہنے کو کہا ،ادھر بک آرگنائزنگ کمیٹی نے اعلان کیا ہے کہ کتاب کی رونمائی کسی صورت نہیں روکی جائے گی اور لانچنگ تقریب مقررہ وقت پر ہوگی ،،خورشید قصوری نے کتاب میں مسئلہ کشمیر کے حل کیلیے پرویز مشرف کے دور میں ہونیوالی بیک ڈور ڈپلومیسی کا ذکر کیا ہے اور اس مسئلے کے کچھ ممکنہ حل بھی تجویز کیے ہیں

Most Popular