سندھ ہائیکورٹ نے اسلام آباد دھرنے کیخلاف درخواست پر سماعت میں مزید دلائل طلب کرلئے جبکہ اسلام آباد بند کرنے کے عمران خان کے اقدام کیخلاف لاہور ہائی کورٹ میں درخواست دائر کردی گئی۔

 سندھ ہائیکورٹ نے اسلام آباد دھرنے کیخلاف درخواست پر سماعت میں مزید دلائل طلب کرلئے جبکہ اسلام آباد بند کرنے کے عمران خان کے اقدام کیخلاف لاہور ہائی کورٹ میں درخواست دائر کردی گئی۔

سندھ ہائیکورٹ کے چیف جسٹس سجاد علی شاہ پر مشتمل دورکنی بینچ نے کیس کی سماعت کی۔ بیرسٹرعلی طاہر کیجانب سے دائر درخواست میں موقف اختیار کیا گیا کہ عمران خان کی جانب سے اسلام آباد کو بند کرنے اور دھرنا دینے کی دھمکی دی گی ہے۔ انہوں نے عدالت سے استدعا کی دھرنے کو روکا جائے۔ چیف جسٹس سجاد علی شاہ نے ریمار کس دیئے کہ یہاں کیوں درخواست دائر کی۔ دھرنا اسلام آباد میں ہے تو وہاں کے ہائیکورٹ میں درخواست دائر کریں۔ درخواستگزار کا کہنا تھا کہ قومی مفاد میں کہیں بھی درخواست دی جاسکتی ہے۔ عدالت نے ہدایت کی کہ آئندہ سماعت پر اس حوالے سے مزید دلائل دیئے جائیں۔ دوسری جانب لاہور ہائیکورٹ میں بھی اسلام آباد بند کرنے کے اقدام کیخلاف درخواست دائر کی گئی ہے۔ درخواست میں موقف اختیار کیا گیا ہے کہ عمران خان پاکستانی شہریوں کو بغاوت کیلئے اکسا رہے ہیں۔ اسلام آباد بند کیا گیا تو پارلیمنٹ، سپریم کورٹ، کیبنٹ سیکریٹریٹ اور تمام سرکاری محکمے بھی بند ہوجائیں گے۔ قانون کے مطابق اپوزیشن، ریاست کے تابع ہے۔ اپوزیشن، ریاست کی نمائندہ حکومت کو ہٹانے کی کوشش نہیں کرسکتی۔ عمران خان اپنے حلف کی خلاف ورزی کرتے ہوئے حکومت کو گرانے کی کوشش کررہے ہیں۔ درخواستگزار نے عدالت سے استدعا کی ہے کہ عمران خان کے اسلام آباد بند کرنے کے اقدام کو روکنے کے احکامات صادرکئے جائیں۔

Most Popular