عید میلادالنبی کے موقع پرجڑواں شہروں میں سیکیورٹی کے سخت انتظامات ہیں، جلوسوں کے سیکیورٹی کے لیے پولیس کے ہزاروں اہلکارفرائض انجام دے رہے ہیں۔

عید میلادالنبی کے موقع پرجڑواں شہروں میں سیکیورٹی کے سخت انتظامات ہیں، جلوسوں کے سیکیورٹی کے لیے پولیس کے ہزاروں اہلکارفرائض انجام دے رہے ہیں۔

وفاقی دارلحکومت میں عید میلاد النبٰی کے جلوسوں کی سیکیورٹی کے لیے دو ہزار سے زائد اہلکاروں کوتعینات کیا گیا ہے جبکہ رینجرزکے اہلکاربھی معاونت فراہم کر رہے ہیں اسلام آباد میں میلاد النبی کا مرکزی جلوس جی سیون سے شروع ہوگا جوآبپارہ میں سخی بادشاہ کے مزار پر پہنچ کراختتام پزیرہوگا۔ راولپنڈی سے بھی برآمد ہونے والا مرکزی جلوس بنی چوک سے نکل کراپنے روایتی راستوں سے ہوتا ہوا اپنی منزل پرپہنچ کراختتام پذیرہوگا۔ راولپنڈی میں پانچ ہزارکے قریب پولیس اہلکار سیکیورٹی کے فرائض سرانجام دے رہے ہیں جبکہ شہر میں ٹرکوں کے داخلے پر پابندی عائد کی گئی ہے۔ سیکیورٹی پلان کے تحت جڑواں شہروں کے داخلی اورخارجی راستوں پرگاڑیوں کی چیکنگ بھی کی جارہی ہے۔ وزیر داخلہ رحمان ملک کا کہنا ہے کہ اسلام آباد میں سیکیورٹی خدشات نہیں ہیں اس لیے موبائل فون سروس بھی معطل نہیں کی گئی۔ میلاد النبی کے جلوسوں کے راستوں کی بم ڈسپوزل سکواڈ کی مدد سے چیکنگ کی گئی تاکہ کسی بھی ممکنہ تخریب کاری سے بچا جا سکے۔ پولیس اہلکاروں کا کہنا ہے کہ وہ اپنے فرائض خوش اسلوبی سے انجام دے رہے ہیں تاکہ کوئی بھی ناخوشگوارواقعہ رونما نہ ہوسکے۔ جلوسوں کے ہمراہ مرد پولیس اہلکاروں کے ساتھ ساتھ لیڈیز اہلکار بھی موجود ہیں کسی بھی ممکنہ صورت حال کے پیش نظر راولپنڈی اوراسلام آباد کے ہسپتالوں میں ڈاکٹرز اور عملے کوموجود رہنے کی ہدایات کی گئی ہیں۔

About the author /

Waqt News

Waqt News Web Team

Most Popular