نہ ماں کی آہ و بکا سے سفاک قاتلوں کے ہاتھ کانپے ، نہ ہی معصوم سسکیوں سے دل لرزے،رشتہ داروں کا خون سفید ہوگیا

 نہ ماں کی آہ و بکا سے سفاک قاتلوں کے ہاتھ کانپے ، نہ ہی معصوم سسکیوں سے دل لرزے،رشتہ داروں کا خون سفید ہوگیا

جب محرم رشتے داروں کا خون ہی سفید ہوجائے تو کوئی کسے اپنا دکھڑا سنائے،، دکھیاری ماں اپنی تین ماہ کی بچی کی منتیں کر رہی ہے،، میری بیٹی،، ایک بار تو رو کر دکھا دے،، اپنی ماں کی طرف دیکھ ،، اس کا حال تو پوچھ ۔

نارروال میں پسند کی شادی کرنے پر لڑکی کے ماموں اور چچا نے مل کر تین ماہ کی نواسی کو قتل کردیا،، سگے رشتوں کی سفاکی دیکھنے والی ماں پر غشی کے دورے ۔تھانہ بد وملہی کے علاقے بسے والی کی اقرا نے دو سال قبل اپنے رشتہ دار شفاقت سے پسند کی شادی کی تھی،، اقرا کے ماموں سہیل ، بشارت ، چچا حافظ عبدالمجید اور محمد علی نے نانا کی بیماری کا بہانہ بنا کر خاتون کو اپنے گھر بلایا،، اقرا جب اپنے بھائی اور دیور کے ساتھ آئی تو ملزمان نے انہیں تشدد کا نشانہ بنایا،، سفاک رشتہ داروں کا جب بڑوں پر تشدد سے دل نہ بھر ا تو انہوں نے اپنی ہی تین ماہ کی نواسی کے سر پر رائفل کا بٹ مار کر معصوم کلی کو مسل کر رکھ دیاقتل کی اندوہناک واردات کا پتہ چلا تو پولیس اہلکار بھی موقع پر پہنچ گئے،، معمول کی کارروائی کا آغاز کردیا گیا ہے،، لیکن،، دکھیاری ماں کے زخموں پر مرہم تو اسی وقت رکھا جائے گا،، جب سفاک مجرم اپنے انجام کو پہنچیں گے 

Most Popular