پاکستان اور انگلینڈ کا سیمی فائنل:38 فیصد ٹکٹیں انڈین شائقین کے پاس

پاکستان اور انگلینڈ کا سیمی فائنل:38 فیصد ٹکٹیں انڈین شائقین کے پاس

آئی سی سی چیمپیئنز ٹرافی کا پہلا سیمی فائنل بدھ کو کارڈف میں پاکستان اور انگلینڈ کے درمیان کھیلا جانا ہے۔پاکستانی ٹیم کے سیمی فائنل میں پہنچنے کے بعد جہاں پاکستانی شائقین میں اس میچ کے حوالے سے بہت جوش و خروش پایا جاتا ہے وہیں گلیمورگن کرکٹ کلب کے سربراہ کا کہنا ہے کہ اس میچ کے تمام ٹکٹ پہلے ہی فروخت ہو چکے ہیں اور اس کے ایک تہائی سے زیادہ خریدار انڈین ہیں۔شسی سی کے چیف ایگزیکیٹو ہیئو مورس نے کہا کہ 'جب ہمیں یہ میچ منعقد کروانے کے لیے کہا گیا تو ہمیں علم نہیں تھا کہ کون سی ٹیم اس میں حصہ لے گی لیکن دو مہینے قبل ہی اس میچ کی تمام ٹکٹیں بک گئیں اور انھیں خریدنے والے 38 فیصد افراد انڈین شائقین ہیں۔'انڈیا کی ٹیم بھی سیمی فائنل میں پہنچی ہے تاہم وہ اپنا میچ 15 جون کو برمنگھم میں کھیلے گی۔ہیئو مورس نے انڈین شائقین سے گذارش کی ہے کہ اگر وہ میچ دیکھنے کارڈف کے میدان میں نہیں آسکتے تو آئی سی سی کی ویب سائٹ پر ان ٹکٹوں کو ان کی اصل قیمت پر دوبارہ بیچ دیں تاکہ انگلینڈ اور پاکستان کے شائقین یہ ٹکٹ خرید سکیں۔'یہ انگلینڈ اور پاکستان کے حمایتیوں کے لیے آئی سی سی کی ویب سائٹ سے ٹکٹ خریدنے کا اچھا موقع ہے۔'دوسری جانب انگلینڈ کے سابق کپتان مائیکل وان نے کارڈف پر تنقید کی ہے کہ ٹورنامنٹ کے دوران صرف کارڈف ہی تھا جہاں کے میدان میں نشستیں خالی تھیں۔'میں جب دیکھتا ہوں کے ایک میدان میں صرف 14000 سیٹیں ہیں اور وہ بھی نہیں بھر سکیں، تو یہ کرکٹ کے لیے ایک لمحہ فکریہ ہے کہ آپ ایک بڑے ٹورنامنٹ میں بھی شائقین کی دلچسپی پیدا نہیں کر سکتے، تو میں جاننا چاہتا ہوں کہ ایسا کیوں ہے۔'واضح رہے کہ پاکستان اور سری لنکا کے درمیان کھیلے جانے والا میچ جو کہ ناک آٹ کی حیثیت اختیار کر گیا تھا، اسے دیکھنے 10800 لوگ میدان میں موجود تھے۔ ہیئو مورس نے اس کا دفاع کرتے ہوئے کہا کہ کارڈف میں ہونے والے چار میں سے دو میچ مکمل طور پر بِک چکے تھے لیکن ہمیں یہ معلوم کرنا ہے کہ ٹکٹ خریدنے کے باوجود لوگ میچ دیکھنے کیوں نہیں آئے۔ان کا خیال تھا کہ ہو سکتا ہے کہ خراب موسم کی وجہ سے لوگوں نے نہ آنے کا فیصلہ کیا ہو۔

Most Popular