معروف ادیبہ اور شہرہ آفاق ڈرامہ نگار فاطمہ ثریا بجیا کی اٹھا سیویں سالگرہ آج منائی جا رہی ہے

Sep 01, 2018 | 07:59

پاکستانی ٹیلی ویژن کی بنیادوں کو اپنی تحریروں سے مضبوط اور توانا کرنے والی فاطمہ ثریا بجیا نے انیس سو ساٹھ میں کیرئیر کا آَغاز کیا،، تھیٹر ریڈیو اور ٹیلی ویژن کیلئے ان گنت کامیاب اور سپرہٹ ڈرامے تخلیق کئے،، فاطمہ ثریا بجیا کا تعلق ادبی گھرانے سے تھا،،، حیران کن بات یہ ہے کہ بجیا کبھی سکول نہیں گئیں،،، لیکن ان کے پہناوے سے لے کر نشست اور طرز کلام سے برصغیر کے مسلمانوں کی تہذیب جھلکتی تھی،،، فاطمہ ثریا بجیا سادگی،، محبت اور شفقت کا پیکر تھیں،،شمع، آگہی، افشاں ، عروسہ ، انا ، انارکلی ، زینت ، آگہی ، بابر اور سسی پنوں ان کے مقبول ترین ڈراموں میں سے ہیں ، انہوں نے اپنی تصانیف میں رشتوں کی اہمیت محبت اور خلوص کا درس دیا،، فاطمہ سریا بجیا نے بچوں کے لیے بھی کئی پروگرام پروڈیوس کیے ادبی خدمات کے صلے میں فاطمہ ثریا بجیا کو ملکی اور غیر ملکی اعزازات سے نوازا گیا،، فاطمہ ثریا بجیا ادب کے افق کے درخشندہ ستارہ تھیں ان کی وفات سے اردو ادب میں پیدا ہونے والا خلاء کبھی پر نہیں ہوسکتا ۔

مزیدخبریں