العزیزیہ ریفرنس: نوازشریف نے واجد ضیاء کے بیان میں تبدیلی ہائیکورٹ میں چیلنج کردی.

Sep 01, 2018 | 14:38

سابق وزیر اعظم میاں محمد نواز شریف کے وکیل خواجہ محمد حارث نے العزیزیہ اسٹیل ملز ریفرنس میں 30 اگست کو نیب کے گواہ واجد ضیاء پر جرح کے دوران ہونے والی مبینہ تبدیلی کو اسلام آباد ہائی کورٹ میں چیلنج کر دیا ۔درخواست میں موقف اختیار کیا گیا کہ جرح کے دوران واجد ضیاء کے بیان میں تبدیلی کی گئی واجد ضیاء کے 30 اگست کے ریکارڈ بیان کو ختم کر کے دوبارہ جرح کا موقع دینے کی استدعا کی گئی ، خواجہ حارث نے الزام عائد کیا تھا کہ جب وہ واجد ضیاء پر جرح کررہے تھے تو احتساب عدالت کے جج محمد ارشد ملک نے جو پہلے سے لکھا گیا بیان تھا اس کو کاٹا اور اس کے بعد دوبارہ نیب پراسیکیوٹر کے اعتراض کو تحریر کر دیا۔خواجہ حارث کے مطابق یہ مبینہ طور پر تبدیلی ہے اور وہ اسے اسلام آباد ہائی کورٹ میں چیلنج کریں گے خواجہ حارث نے احتساب عدالت کے 30 اگست کے حکم نامہ کو اسلام آباد ہائی کورٹ میں چیلنج کر دیا اور استدعاکی کہ اس روز کی تمام کارروائی کو ختم کر دیا جائے اور انہیں واجد ضیاء پر جرح کا دوبارہ موقع دیا جائے اور احتساب عدالت کو حکم دیا جائے کہ وہ واجد ضیاء کا بیان ریکارڈ کرے اور اس کو ریکارڈ پر لایا جائے اور 30 اگست کی تمام کاروائی کو کالعدم قرار دیا جائے درخواست میں احتساب عدالت کے جج محمد ارشد ملک کو فریق بنایا گیا ۔


 

مزیدخبریں